کیلے کا لیس ونگ کیڑا

  • علامات

  • محرک

  • حیاتیاتی کنٹرول

  • کیمیائی کنٹرول

  • احتیاطی تدابیر

کیلے کا لیس ونگ کیڑا

Stephanitis typica

کیڑا


لب لباب

  • مادہ اور بڑے کیڑوں کی کلونی پتوں کی نچلی طرف پائی جاتی ہیں.
  • پتوں کی اوپری طرف کھانے کا عمل چھوٹی ، سفید، لا سبز دھبوں کے طورپر نظر آتا ہے.
  • سیاہ مادہ پتوں کی نچلی طرف پائی جا سکتی ہے.
  • کلونی والی جگہیں پیلی سے بھوری اور خشک ہو جاتی ہیں.
  • متاثرہ پودے مضر صحت اور ان پر نشانات کے طور پر نظر آتے ہیں.

میزبانان:

کیلا

plant_turmeric

علامات

کثرت پتوں پر فاصلے سے دیکھی جا سکتی ہے۔ بڑے کیڑے اور مادہ پتوں کی نچلی طرف پائی جاتی ہیں جہاں یہ کلونی کی صورت میں رہتی ہیں اور پتوں کو کھاتی ہیں۔ عموما، کیڑے درمیانی رگ کے گرد پتے کے رس کو کھاتے ہیں۔ کھانےکے عمل سے نقصان پتے کے اوپری طرف چھوٹے سفید لاسبز دھبوں کے طور پر نظر آتا ہے۔ سیاہ کیڑوں کا خارج کردہ مواد پتے کی نچلی سطح پر باقی رہتا ہے۔ کلونیوں والا علاقہ زرد سے بھورا ہو جاتا ہے اور سوکھ جاتا ہے۔ پودے کی بڑھوتری رک جاتای ہے اور پودا بیمار دکھائی دیتا ہے۔

محرک

بڑے کیڑے پیلے سے سفید اور جسامت میں نیم شفاف، جھالر لیس کی ماند پنکھ کے ساتھ تقریبا 4 ملی میٹر کے ہوتے ہیں۔ مادہ بھونرا پتے کی نچلی طرف تقریبا 30 انڈے دیتی ہے۔ تقریبا 12 دنوں کے بعد پیلا بھونرا انڈوں سے نکلتا ہے۔ ان کی نشوونما کا مرحلہ 13 دنوں تک رہتا ہے۔ ابھی تک، بنانا لیس ونگ بگ سے فصل کی پیداوار کے نقصان کے بارے میں کوئی معلومات معلوم نہیں ہے۔ ابھی تک، اس جراثیم سے کیلے کے پودوں پر زیادہ نقصان کے بارے میں کوئی رپورٹس نہیں ہیں۔

حیاتیاتی کنٹرول

کیڑے کی شکارخور نسلیں جیسا کہ سٹیتھوکونس پریفیکٹس کثرت کو کم کر سکتا ہے اگر اس کو مربوط حکمت عملی میں استعمال کیا جائے۔ نیم کے تیل اور لہسن ( 2 فیصد) کے ایملشن کو کثرت کو قابو کرنے کے لیے فولیئر سپرے کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔

کیمیائی کنٹرول

ہمیشہ حیاتیاتی علاج کے ساتھ مل کر حفاظتی اقدامات کے ساتھ ایک مربوط نقطہ نظر پر غور کریں۔ کیڑے مار دوا کا استعمال اس بیماری سے لڑنے کے لیے زیادہ عام طریقہ ہے۔ ڈائیمیتھوئٹ پر مبنی مصنوعات کو فولیئر سپرے کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔ ان کو لاگو کیا جائے تا کہ پتوں کی نچلی سطح مصنوعات سے ڈھک جائے۔

احتیاطی تدابیر

  • اگر دستیاب ہو تو پودوں کی متحمل یا مزاحمتی اقسام کو لگائیں.
  • جراثیم کی علامات کےلیے پودوں یا کھیتوں کی باقاعدگی سے دیکھ بھال کریں.
  • جراثیم کی تعداد کو کم کرنے کے لیے فصل میں متاثرہ باہری ورل پتوں کو ہاتھ سے اٹھائیں اور ختم کر دیں.