ہیلیکوورپا کیٹرپیلر

  • علامات

  • محرک

  • حیاتیاتی کنٹرول

  • کیمیائی کنٹرول

  • احتیاطی تدابیر

ہیلیکوورپا کیٹرپیلر

Helicoverpa armigera

کیڑا


لب لباب

  • پھولوں، پھلوں ، ڈوڈوں اور پتوں پر دھبوں کی صورت میں کھانے کے عمل سے نقصان ہوتا ہے.
  • بیج یا دانے مکمل طور پر استعمال ہو جاتے ہیں، جس کا نتیجہ پیداوار اور میعار کے شدید نقصان کے طور پر نکلتا ہے.
  • ثانوی پیتھوجن کی نشوونما ہوتی ہے جو ٹشوز اور پھلوں کے سڑنے کا سبب بنتی ہے.

میزبانان:

پھلی/سیم

شملہ مرچ اور مرچی

بینگن

مٹر

ٹماٹر

آلو

کپاس

گندم

سویا بین

سرغو

مکئی

مونگ پھلی

گنا

جو

دال

علامات

چھتر کے اوپر چھوٹے پتوں اور لبمے حصوں پر سفید سے بھورے انڈے گھچوں کی صورت میں ہائے جاتے ہیں۔ سنڈی کو پودے کے کسی بھی ٹشو پر کھاتے دیکھا جا سکتا ہے لیکن یہ زیادہ تر پھولوں اور ڈوڈوں / کناروں/ پھلوں پر، ہوسٹ کے پودے پر منحصر ہوتے ہوئے حملہ کرتے ہیں۔ چھوٹی سنڈی پتوں، نشوونما کے حصوں یا پھل کے ڈھانچے کو متاثر کرتی ہے۔ بڑی سنڈی پھولوں یا چھوٹے ڈوڈوں/ کناروں، پھل کو نقصان پہنچاتی ہے، یہ ان میں سوراخ کرتی اور بیجوں کو متاثر اور ان کو مارکیٹ کے لیے ناقص بناتی ہیں۔ سوراخوں کے اردگرد نم دھبے نمودار ہوتے ہیں۔ دھبوں پر ثانوی پیتھوجن کی نشوونما متاثرہ ٹشوز کے سڑنے کا سبب بنتی ہے۔ ایچ۔ ارمیگرا کھیت میں سب سے زیادہ خطرناک کیڑا ہے۔

محرک

نقصان ہیلیکوورپا ارمیگرا کیڑے جو متعدد فصلوں میں عام کیڑا ہے اس سے ہوتا ہے۔ کیڑے 3-4 سینٹی میٹر لمبے پنکھوں کے ساتھ ہلکے بھورے ہوتے ہیں۔ ان کے سیاہ لکیریوں کے ساتھ پیلے سے نارنجی یا بھورے پنکھ ہوتے ہیں۔ ان کے سیاہ رگوں اور سیاہ دھبوں کے ساتھ آگئے کے پنکھ سفید ہوتے ہیں۔ مادہ عام طور پر چھتر کے اوپر، پھولوں یا پتے کے اوپر گچھوں کی صورت میں گول سفید انڈے دیتی ہیں۔ لاروا بلوغت کے مراحل پر مبنی ہوتے ہوئے زیتونی سبز سے گہرے سرخ بھورے ہوتے ہیں۔ ان کے جسم سیاہ دھبوں سے داغدار ہوتا ہے اور ان کے سر سیاہ ہوتے ہیں۔ بلاغت کے بعد کے مراحل میں، لکیریں اور دھاریاں ان کے سر اور پنکھوں پر پھیل جاتی ہیں۔ جیسے ہی یہ بالغ ہوتے ہیں، یہ مٹی میں منجھ روپ دھارتے ہیں۔ ان کی آبادی پھل/ ڈوڈے کے بننے کے وقت زیادہ ہوتی ہے، جس سے پیداوار کو زیادہ نقصان ہوتا ہے۔

حیاتیاتی کنٹرول

ٹریکوگریما بھڑ ( ٹی۔ کیلونس یا ٹی۔ بریسیلینسز) کو انڈوں پر حملہ کرنے کے لیے پھولوں کے بننے کے وقت استعمال کر سکتے ہیں۔ میکرپلیٹس، ہیٹروپیلما اور نیٹیلیا بھڑ کو سنڈی کو ختم کرنے کے لیے استعمال کر سکتے ہیں۔ شکارخور کیڑے ( بڑی آنکھ والا کیڑا، گلوسی شیلڈ بگ اور سپینڈ پریڈیٹری شیلڈ بگ) ، چیونٹیاں ، مکڑیاں، کیڑے اور مکھیاں سنڈی پر حملہ کرتے اور ان کو فروغ دینا چاہیے۔ سپینوسیڈ، نیوکلیوپولیہیڈروائرس ( این پی وی) ، میٹررہیزیئم انیسوپیلائے، بیووریا بیسیانا یا بیسیلس تھرینگینسز پر مبنی حیاتیاتی کیڑے مار دوا کو سنڈی کو قابو کرنے کے لیے استعمال کر سکتے ہیں۔ بوٹینسیل مصنوعات ، جیسا کہ نیم کا تیل، نیم کے بیج کے اخارج ( این ایس کے ای 5 فیصد) ، مرچ یا لہسن کو ڈوڈے کے پھوٹنے کے مرحلہ پر فولیئر سپرے کے طور پر استعمال کر سکتے ہیں۔

کیمیائی کنٹرول

ہمیشہ حیاتیاتی علاج کے ساتھ مل کر حفاظتی اقدامات پر مربوط نقطہ نظر پر غور کریں۔ فائدہ مند کیڑوں کو نقصان پہنچائے بغیر منتخب کیڑے مار دوا کے استعمال سے کھیت میں کیڑوں سے چھٹکارا پایا جا سکتا ہے۔ انڈوں اور سنڈی کے لئے معائنہ کرنا بہت ضروری ہے کیونکہ کیٹرپیلر کیڑے مار دوا کے خلاف بہت جلد مزاحمت بناتا ہے۔ کلورنٹرینیلیپرول، کلوروپیریفوس، سیپرمیتھرن، ایلفا اور زیٹا سیپرمیتھرن ، امیمیسٹن بینزویٹ ، اسفنولریٹ، فلوبنڈیامیڈ، میتھومایل یا انڈوکسکرب پر مبنی مصنوعات کا استعمال کر سکتے ہیں ( عام طور ہر @ 2۔5ملی لیٹر/ لیٹر)۔ ان کا استعمال پہلے پھول کے مرحلے میں ہونا چاہیے اور 10 – 15 دنوں کے وقفے سے ہونا چاہیے۔ کم قیمیتی فصلوں میں کیمیائی علاج زیادہ موثر نہ ہوگا۔

احتیاطی تدابیر

  • اگر مزاحمتی یا متحمل اقسام دستیاب ہوں تو ان کا استعمال کریں.
  • کیڑوں کی زیادہ آبادی ہونے سے بچنے کے لیے پودوں کو جلدی لگائیں.
  • پودوں کے درمیان مناسب فاصلہ رکھیں.
  • دائرہ حیات کو توڑنے کے لیے غیر کاشت شُدہ کچھ جگہیں چھوڑ دیں.
  • کیٹر پلر کا کھانے والے پرندوں کو مائل کرنے کے لئے پرندوں کے اڈے بنائیں.
  • ہر 5 یا 6 قطاروں کے بعد پھندا نما فصلیں جیسا کہ میریگولڈ ( ٹیگیٹس اریکٹا) کا استعمال کریں.
  • کیڑوں کی آبادی کی نگرانی اور ان کو پکڑنے کے لیے ہلکے یا فیرومون پھندوں کا استعمال کریں.
  • اچھی نکاسی کی فراہمی کے ساتھ پانی کے دباؤ سے گریز کریں.
  • انڈوں کی موجودگی اور پھولوں ، پھلوں ڈوڈوں پر نقصان کے لیے پودوں کی نگرانی کریں.
  • انڈوں والے لاروا، پودوں اور پتوں کو ہاتھ سے ہٹائیں.
  • کھیت کے اندر اور اردگرد سے گھاس کو ہٹائیں.
  • ہر ایک فصل کے بعد فصل کی کٹائی کے فضلے کو ختم کر دیں.
  • کھیت سے متاثرہ پودوں کو ہٹائیں.
  • کیڑوں کو قدرتی شکارخوروں اور سورج کی روشنی کے سامنے لانے کے لیے فصل کی کٹائی کے بعد ہل چلائیں.
  • یک فصلی سے گریز کریں اور فائدہ مند کیڑوں کے ساتھ فصل کی گردش کروائیں.