چاول

Oryza sativa


پانی دینا
اعلی

زراعت
ٹرانسپلانٹ شدہ

کٹائی
90 - 120 دن

مزدور
اعلی

سورج کی روشنی
مکمل سورج

pH کی قدر
5.5 - 8.5

درجہ حرارت
10°C - 40°C

زرخیزکاری
متوسط


چاول

تعارف

چاول عموماً سالانہ فصل کے بطور اگایا جاتا ہے۔ اس کیلئے بے پناہ محنت اور بڑی مقدار میں پانی درکار ہے۔ 16 سے 27 ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان درجہ حرارت موزوں ہیں۔ بیج بونے سے لے کر کٹائی تک 9 سے 120 (یا زیادہ) دن درکار ہیں۔

مشاورت

مفید تجاویز دیکھنے کیلئے اپنا نشوونما کا مرحلہ منتخب کریں!

اپنے موسم کی تیاری

اپنی کیاری کو کھاد دیں
گھاس پھونس کی نشوونما کی روک تھام

دیکھ بھال

صاف میدان یا ڈھلانیں چاول کی پیداوار کیلئے سب سے زیادہ موزوں ہیں۔ چاول اگانے کا روایتی طریقہ کھیتوں میں سیلاب لانا ہے جب نو عمر تخمی پودے لگائے جائیں یا اس کے بعد بھی۔ اس آسان طریقے کیلئے محفوظ منصوبہ بندی اور پانی زخیرہ اور چینل کرنے کی سروسنگ درکار ہے مگر یہ کم طاقتور جھاڑیوں اور کیڑے والے پودوں کی نشوونما کو کم کرتا ہے جن میں زیر آب نشوونما کا مرحلہ نہ ہو، نیز ہر طرح کے کیڑوں کی حوصلہ شکنی کرتا ہے۔ جبکہ چاول کی زراعت کیلئے سیلاب زدگی ضروری نہیں، آبیاری کے دیگر تمام طریقوں کیلئے نشوونما کے عرصوں میں جھاڑیوں اور کیڑوں کو قابو کرنے کیلئے بہت زیادہ مشقت درکار ہے اور مٹی کو زرخیز بنانے کیلئے ایک مختلف حکمت عملی درکار ہے۔

مٹی

چاول سب سے بہترین سیلابی زمین اور زرخیز دریائی پیالوں میں اگتے ہیں۔ تاہم، یہ فصل متغیر ہے اور مکس مٹی یا لومی اور چکنی مٹی میں بھی اگ سکتی ہے بشرطیکہ کہ کافی پانی اور کھاد دستیاب ہو۔

آب و ہوا

درجہ حرارت 16 سے 27 ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان اور بارش 100 سینٹی میٹر سے 200 سینٹی میٹر تک چاول کی نشوونما کیلئے مثالی ہیں۔ تاہم، کٹائی کے دوران بارش نقصان دہ ہے۔ 24 ڈگری سینٹی گریڈ کے گرد سالانہ کوریج درجہ حرارت مثالی ہے ۔ نشوونما کیلئے، چاول کے بیجوں کو پانی کی مخصوص مقدار جذب کرنا ہوتی ہے تاکہ وہ بیج کی حالت سکوت سے باہر آ سکیں۔

ممکنہ بیماریاں

نشوونما کا مرحلہ منتخب کر کے دیکھیں کہ اس عرصے کے دوران کون سی بیماریاں آپ کی فصل کو نقصان پہنچا سکتی ہیں۔

چاول

چاول

اگانے کے بارے میں سبھی معلومات پلانٹکس میں حاصل کریں!


چاول

Oryza sativa

چاول
ابھی پلانٹکس استعمال کریں!

تعارف

چاول عموماً سالانہ فصل کے بطور اگایا جاتا ہے۔ اس کیلئے بے پناہ محنت اور بڑی مقدار میں پانی درکار ہے۔ 16 سے 27 ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان درجہ حرارت موزوں ہیں۔ بیج بونے سے لے کر کٹائی تک 9 سے 120 (یا زیادہ) دن درکار ہیں۔

اہم حقائق

پانی دینا
اعلی

زراعت
ٹرانسپلانٹ شدہ

کٹائی
90 - 120 دن

مزدور
اعلی

سورج کی روشنی
مکمل سورج

pH کی قدر
5.5 - 8.5

درجہ حرارت
10°C - 40°C

زرخیزکاری
متوسط

مشاورت

مفید تجاویز دیکھنے کیلئے اپنا نشوونما کا مرحلہ منتخب کریں!

اپنے موسم کی تیاری

اپنی کیاری کو کھاد دیں
گھاس پھونس کی نشوونما کی روک تھام
چاول

چاول

اگانے کے بارے میں سبھی معلومات پلانٹکس میں حاصل کریں!

دیکھ بھال

صاف میدان یا ڈھلانیں چاول کی پیداوار کیلئے سب سے زیادہ موزوں ہیں۔ چاول اگانے کا روایتی طریقہ کھیتوں میں سیلاب لانا ہے جب نو عمر تخمی پودے لگائے جائیں یا اس کے بعد بھی۔ اس آسان طریقے کیلئے محفوظ منصوبہ بندی اور پانی زخیرہ اور چینل کرنے کی سروسنگ درکار ہے مگر یہ کم طاقتور جھاڑیوں اور کیڑے والے پودوں کی نشوونما کو کم کرتا ہے جن میں زیر آب نشوونما کا مرحلہ نہ ہو، نیز ہر طرح کے کیڑوں کی حوصلہ شکنی کرتا ہے۔ جبکہ چاول کی زراعت کیلئے سیلاب زدگی ضروری نہیں، آبیاری کے دیگر تمام طریقوں کیلئے نشوونما کے عرصوں میں جھاڑیوں اور کیڑوں کو قابو کرنے کیلئے بہت زیادہ مشقت درکار ہے اور مٹی کو زرخیز بنانے کیلئے ایک مختلف حکمت عملی درکار ہے۔

مٹی

چاول سب سے بہترین سیلابی زمین اور زرخیز دریائی پیالوں میں اگتے ہیں۔ تاہم، یہ فصل متغیر ہے اور مکس مٹی یا لومی اور چکنی مٹی میں بھی اگ سکتی ہے بشرطیکہ کہ کافی پانی اور کھاد دستیاب ہو۔

آب و ہوا

درجہ حرارت 16 سے 27 ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان اور بارش 100 سینٹی میٹر سے 200 سینٹی میٹر تک چاول کی نشوونما کیلئے مثالی ہیں۔ تاہم، کٹائی کے دوران بارش نقصان دہ ہے۔ 24 ڈگری سینٹی گریڈ کے گرد سالانہ کوریج درجہ حرارت مثالی ہے ۔ نشوونما کیلئے، چاول کے بیجوں کو پانی کی مخصوص مقدار جذب کرنا ہوتی ہے تاکہ وہ بیج کی حالت سکوت سے باہر آ سکیں۔

ممکنہ بیماریاں

نشوونما کا مرحلہ منتخب کر کے دیکھیں کہ اس عرصے کے دوران کون سی بیماریاں آپ کی فصل کو نقصان پہنچا سکتی ہیں۔