لال مَکڑی - انگور

انگور

لال مَکڑی

Tetranychidae


لب لباب

  • پتوں پر چھوٹے دھبے ہونا.
  • ٹہنیوں اور پتوں کے درمیان مکڑی کے چھوٹے جالے دیکھے جا سکتے ہیں.
  • سوکھے ہوئے پتے ہونا.

علامات

لال مکڑی جب پتوں کو اپنی خوراک بناتی ہے تو پتوں کی اوپری سطح پر سفید یا پیلے دھبے بن جاتے ہیں۔ مکڑی کے انڈے پتوں کی نچلی طرف چپک جاتے ہیں۔ لال مکڑی بذاتِ خود ریشم کے کیڑے کے خول کی مانند جالے میں موجود ہوتی ہے۔ جیسے ہی بیماری کی شدت میں اضافہ ہوتا ہے تو ابتداء میں پتوں کا رنگ کانسی یا سلور کی طرح دکھائی دیتا ہے اور پھر بھربھرے ہو جاتے ہیں، پتوں کی دھاریوں میں دراڑ پیدا ہوتی ہے، اور بلآخر پتہ گر جاتا ہے۔ مکڑی جالا بُنتی ہے جو پودے کی سطح کو اپنی لپیٹ میں لے سکتا ہے۔ شاخوں کے سِرے بے برگ ہو سکتے ہیں اور اطراف کی شاخیں بڑھنا شروع کر دیتی ہیں۔ بہت زیادہ نقصان کی صورت میں، پھلوں کی مقدار کے ساتھ ساتھ معیار بھی کم ہو جاتا ہے۔

محرک

نقصان نوع ٹیٹرانیکس کی لال مکڑیوں کی وجہ سے ہوتا ہے، بالخصوص ٹی۔ آرٹیکا اور ٹی۔ سینابارینس۔ بالغ مادہ مکڑی 0.6 ملی میٹر لمبی ہوتی ہے، اس کے بیضوی جسم پر دو پیلے سبزی مائل گہرے جوڑ ہوتے ہیں، اور اس کی کمر پر لمبے بال ہوتے ہیں۔ سردیوں میں مادہ سرخی مائل ہوتی ہیں۔ بہار کے موسم میں، مادہ مکڑی پتوں کے نچلی طرف گول اور نیم شفاف انڈے دیتی ہے۔ پیوپے پیلے سبزی مائل ہوتے ہیں اوران کی پُشت پر گہرے نشانات ہوتے ہیں۔ مکڑیاں اپنے آپ کو پتوں کے نچلی طرف خول میں محفوظ رکھتی ہیں۔ لال مکڑی خشک اور گرم موسم میں پروان چڑھتی ہے اور ایسے حالات میں ایک سال میں 7 نسلوں کو جنم دے گی۔ بشمول گھاس پھونس کے، اس کے میزبان پودوں کی بہت بڑی تعداد موجود ہے۔

حیاتیاتی کنٹرول

کیڑوں کا ہجوم کم ہونے کی صورت میں، بس مکڑیوں کو دھو دیں اور متاثرہ پتوں کو ہٹا دیں۔ ٹی آرٹیکا کی آبادی کو کم کرنے کے لئے توریے کے بیج، تُلسی، سویا بین اور نییم کے تیل پر مبنی تیاریوں کا استعمال کریں. آبادی پر قابو پانے کے لیے لہسن کی چائے، نیٹل سلری یا کرم کش صابن کا استعمال بھی کریں۔ کھیتوں میں، شکار خور مکڑیوں (مثال کے طور پر فوٹو سیلس پرسیمیلس) یا حیاتیاتی کرم کش بیسیلس تھرنجینسس کے ساتھ مخصوص میزبان بائیولوجیکل کنٹرول کو خدمت میں لائیں۔ ابتدائی علاج کے 2 تا 3 بعد ایک دوسرا اسپرے کے علاج کا اطلاق ضروری ہے۔

کیمیائی کنٹرول

ہمیشہ حیاتیاتی علاج (اگر دستیاب ہو) کے ساتھ مل کر حفاظتی اقدامات کے ساتھ ساتھ ایک مربوط نقطہ نظر پر غور کریں. لال مکڑی کا تدارک کیڑے مار ادویات کے استعمال سے بہت مشکل ہے کیوں کہ بیشتر آبادی میں چند سالوں کے استعمال کے بعد مختلف کیمیکلوں کے لیے مزاحمت پیدا ہو جاتی ہے۔ کیمیائی اجزاء کا استعمال احتیاط سے کریں تا کہ یہ شکار خور کیڑوں کی آبادی کو تباہ نہ کرے۔ گیلی گندھک (3 گرام فی لیٹر)، اسپائرومیسیفن (1 ملی لیٹر فی لیٹر)، ڈیکوفول (5 ملی لیٹر فی لیٹر) پر مبنی فطر کش ادویات یا ایبامیکٹن کو مثال کے طور پر (پانی میں پتلا کر کے) استعمال کیا جا سکتا ہے۔ ابتدائی علاج کے بعد 2 تا 3 دن بعد ثانوی اسپرے کے علاج کا اطلاق لازمی ہے۔

احتیاطی تدابیر

  • دستیاب مزاحم انواع لگائیں.
  • اپنے کھیتوں کو باقاعدگی سے مانیٹر کریں اور پتوں کے نچلے حصے کو چیک کریں.
  • متبادل طور پر، پتے کی سطح سے کچھ کیڑوں کو سفید کاغذ کی شیٹ پر جھاڑیں.
  • ماثرہ پتوں یا پودوں کو ہٹائیں.
  • بِچہوُا اور دیگر فالتو جھاڑیوں کو کھیتوں سے ہٹا دیں.
  • گزرگاہوں اور باقاعدہ وقفوں پر موجود دیگر گرد آلود جگہوں پر پانی کا استعمال کریں تاکہ کھیت میں گرد آلود حالات سے بچا جا سکے.
  • فصل کو باقاعدگی سے پانی لگائیں کیونکہ تناؤ کا شکار درخت اور پودے لال مکڑی کے نقصان کیلئے کم مزاحم ہوتے ہیں.
  • حشرات کش ادویات کے استعمال کو کنٹرول کریں تاکہ مفید کیڑوں کو افزائش کا موقع مل سکے.